سید ذکریا علی شاہ

سید ذکریا علی شاہ

ڈائیریکٹر

سید ذکریا علی شاہ26  اگست 2021 کو پاکستان پٹرولیم لمیٹڈ کے بورڈ آف ڈائریکٹرز میں شامل ہوئے۔ وہ بورڈ پروکیورمنٹ کمیٹی کے چیئرمین اور آڈٹ کمیٹی کے رکن ہیں۔

پیشےکے لحاظ سے سول انجینئر ذکریاشاہ کو نجی، سرکاری اور ترقیاتی شعبوں میں 27 سال سے زیادہ کا مربوط کام کرنے کا تجربہ ہے۔ وہ اس وقت وزارت توانائی (پیٹرولیم ڈویژن) کے جوائنٹ سیکرٹری کے طور پر خدمات انجام دے رہے ہیں۔

ذکریاشاہ نے 1998 میں آفس مینجمنٹ گروپ آف پاکستان سول سروسز میں شمولیت اختیارکی اور متعدد اداروں اور وزارتوں میں مختلف عہدوں پر خدمات انجام دے چکےہیں۔ ان میں پریزیڈنٹ  سیکرٹریٹ میں ڈائریکٹر جنرل ، جوائنٹ سیکرٹری (نظم وضبط اورچارہ جوئی)کے طور پر اسٹیبلشمنٹ  ڈویژن، ڈپٹی سیکرٹری (اقوام متحدہ)کی حیثیت سے اقتصادی امور  کے ڈویژن، مراکش  میں پاکستانی سفارت خانےمیں بطور کمرشل کونسلر ،  وفاق کے زیر انتظام قبائلی علاقے  (فاٹا)  ڈویلپمنٹ اتھارٹی میں  بحیثیت  جنرل منیجر پلاننگ    اینڈ ڈویلپمنٹ  اور ریاست ہائے متحدہ امریکہ کی ایجنسی برائے بین الاقوامی ترقی میں بحیثیت ٹیم لیڈر (انفراسٹرکچر)   150 ملین امریکی ڈالر کے ساتھ فاٹا کے لئے روزگار کی فراہمی اورترقی کے پروگرام شامل ہیں.

اس سے قبل انہوں نےچین پاکستان اکنامک کوریڈور اتھارٹی (سی پی ای سی-اے) کے پہلےچیف ایگزیکٹو آفیسراور دیر، خیبر پختونخوا میں ضلعی منتظم افغان مہاجرین کے طور پر  بھی خدمات انجام دیں۔  

 انہوں نے  1993 میں سرحد یونیورسٹی آف انجینئرنگ اینڈ ٹیکنالوجی، پشاور،جواب یونیورسٹی آف انجینئرنگ اینڈ ٹیکنالوجی، پشاور ہے، سے سول انجینئرنگ میں بیچلرآف سائنس حاصل  کیا۔ سول انجینئر ہونے کی وجہ سے انہوں نے قومی اہمیت کے مختلف منصوبوں میں پروجیکٹ ڈائریکٹر کے طور پر کام کیا۔ ان میں  انڈس ہائی وے تک ناردرن بائی پاس کاایکسٹنشن   بشمول اسلام آباد سے پشاور موٹر وے M-1 کے پشاور کےسرے پر چمکنی کے مقام پر انٹر۔چینج ،  راجن پور سے ڈیرہ غاز ی خان تک ا  نڈس ہائی وےکے موجودہ

کیرج وے کی بحالی ، فیض آباد اسلام آباد میں    فل کلوور لیف انٹرچینج کی تعمیر  اور اسلام آباد ایئرپورٹ پر موجودہ رن وے کو مضبوط بنانا  اوراسے  توسیع دینا  شامل ہے۔

سید ذکریا علی شاہ26  اگست 2021 کو پاکستان پٹرولیم لمیٹڈ کے بورڈ آف ڈائریکٹرز میں شامل ہوئے۔ وہ بورڈ پروکیورمنٹ کمیٹی کے چیئرمین اور آڈٹ کمیٹی کے رکن ہیں۔

پیشےکے لحاظ سے سول انجینئر ذکریاشاہ کو نجی، سرکاری اور ترقیاتی شعبوں میں 27 سال سے زیادہ کا مربوط کام کرنے کا تجربہ ہے۔ وہ اس وقت وزارت توانائی (پیٹرولیم ڈویژن) کے جوائنٹ سیکرٹری کے طور پر خدمات انجام دے رہے ہیں۔

ذکریاشاہ نے 1998 میں آفس مینجمنٹ گروپ آف پاکستان سول سروسز میں شمولیت اختیارکی اور متعدد اداروں اور وزارتوں میں مختلف عہدوں پر خدمات انجام دے چکےہیں۔ ان میں پریزیڈنٹ  سیکرٹریٹ میں ڈائریکٹر جنرل ، جوائنٹ سیکرٹری (نظم وضبط اورچارہ جوئی)کے طور پر اسٹیبلشمنٹ  ڈویژن، ڈپٹی سیکرٹری (اقوام متحدہ)کی حیثیت سے اقتصادی امور  کے ڈویژن، مراکش  میں پاکستانی سفارت خانےمیں بطور کمرشل کونسلر ،  وفاق کے زیر انتظام قبائلی علاقے  (فاٹا)  ڈویلپمنٹ اتھارٹی میں  بحیثیت  جنرل منیجر پلاننگ    اینڈ ڈویلپمنٹ  اور ریاست ہائے متحدہ امریکہ کی ایجنسی برائے بین الاقوامی ترقی میں بحیثیت ٹیم لیڈر (انفراسٹرکچر)   150 ملین امریکی ڈالر کے ساتھ فاٹا کے لئے روزگار کی فراہمی اورترقی کے پروگرام شامل ہیں.

اس سے قبل انہوں نےچین پاکستان اکنامک کوریڈور اتھارٹی (سی پی ای سی-اے) کے پہلےچیف ایگزیکٹو آفیسراور دیر، خیبر پختونخوا میں ضلعی منتظم افغان مہاجرین کے طور پر  بھی خدمات انجام دیں۔  

 انہوں نے  1993 میں سرحد یونیورسٹی آف انجینئرنگ اینڈ ٹیکنالوجی، پشاور،جواب یونیورسٹی آف انجینئرنگ اینڈ ٹیکنالوجی، پشاور ہے، سے سول انجینئرنگ میں بیچلرآف سائنس حاصل  کیا۔ سول انجینئر ہونے کی وجہ سے انہوں نے قومی اہمیت کے مختلف منصوبوں میں پروجیکٹ ڈائریکٹر کے طور پر کام کیا۔ ان میں  انڈس ہائی وے تک ناردرن بائی پاس کاایکسٹنشن   بشمول اسلام آباد سے پشاور موٹر وے M-1 کے پشاور کےسرے پر چمکنی کے مقام پر انٹر۔چینج ،  راجن پور سے ڈیرہ غاز ی خان تک ا  نڈس ہائی وےکے موجودہ

کیرج وے کی بحالی ، فیض آباد اسلام آباد میں    فل کلوور لیف انٹرچینج کی تعمیر  اور اسلام آباد ایئرپورٹ پر موجودہ رن وے کو مضبوط بنانا  اوراسے  توسیع دینا  شامل ہے۔